شفق

MORE BYاسماعیل میرٹھی

    شفق پھولنے کی بھی دیکھو بہار

    ہوا میں کھلا ہے عجب لالہ زار

    ہوئی شام بادل بدلتے ہیں رنگ

    جنہیں دیکھ کر عقل ہوتی ہے دنگ

    نیا رنگ ہے اور نیا روپ ہے

    ہر اک روپ میں یہ وہی دھوپ ہے

    طبیعت ہے بادل کی رنگت پہ لوٹ

    سنہری لگائی ہے قدرت نے گوٹ

    ذرا دیر میں رنگ بدلے کئی

    بنفشی و نارنجی و چمپئی

    یہ کیا بھید ہے کیا کرامات ہے

    ہر اک رنگ میں اک نئی بات ہے

    یہ مغرب میں جو بادلوں کی ہے باڑ

    بنے سونے چاندنی کے گویا پہاڑ

    فلک نیلگوں اس میں سرخی کی لاگ

    ہرے بن میں گویا لگا دی ہے آگ

    اب آثار ظاہر ہوئے رات کے

    کہ پردے چھٹے لال بانات کے

    مأخذ :
    • کتاب : intekhab-e-sukhan (Pg. 52)
    • Author : Ibne Kanwal
    • مطبع : Kitabi Duniya (2005-2008)
    • اشاعت : 2005-2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY