شملہ

MORE BYعرش ملسیانی

    حسین جلوے بتوں کے کہاں کہاں نہ ملے

    یہاں ملے جو کہیں زیر آسماں نہ ملے

    ہجوم شملہ میں آنکھیں ترس گئیں صاحب

    مجھے تلاش ہے جن کی وہ مہرباں نہ ملے

    بس ایک عاجز خستہ ہے مغتنم ورنہ

    سخن شناس سخن دوست ہم زباں نہ ملے

    یہ کوہسار یہ اشجار یہ چمن یہ بہار

    میں وہ پرندہ جسے شاخ آشیاں نہ ملے

    سزا ملے کسی بد ذوق کو تو بات بھی ہے

    ستم تو یہ ہے کہ شاعر کو بھی مکاں نہ ملے

    بہ نام عرشؔ بلندی کا مدعی ہوں میں

    درست ہے کہ زمیں پر مجھے اماں نہ ملے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY