تنہائی

عادل منصوری

تنہائی

عادل منصوری

MORE BYعادل منصوری

    وہ آنکھوں پر پٹی باندھے پھرتی ہے

    دیواروں کا چونا چاٹتی رہتی ہے

    خاموشی کے صحراؤں میں اس کے گھر

    مرے ہوئے سورج ہیں اس کی چھاتی پر

    اس کے بدن کو چھو کر لمحے سال بنے

    سال کئی صدیوں میں پورے ہوتے ہیں

    وہ آنکھوں پر پٹی باندھے پھرتی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Hashr ki subh darakhshaz ho (Pg. 71)

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY