تسکین انا

سلیمان اریب

تسکین انا

سلیمان اریب

MORE BYسلیمان اریب

    جب کوئی قرض صداقت کا چکانے کے لیے

    زہر کا درد تہ جام بھی پی لیتا ہے

    اپنا سر ہنس کے کٹا دیتا ہے

    زندگی جبر سہی جبر مسلسل ہی سہی

    سہتا ہے

    اور اس جبر کو سو رنگ عطا کرتا ہے

    حرف کا صوت کا صورت کا فسوں کاری کا

    میں اسے دیکھ کے چپکے سے کھسک جاتا ہوں

    یہ تو میں خود ہوں وہ احمق جس کی

    اپنی رسوائی میں تسکین انا ہوتی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    تسکین انا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY