طفلی کے خواب

اسرار الحق مجاز

طفلی کے خواب

اسرار الحق مجاز

MORE BY اسرار الحق مجاز

    طفلی میں آرزو تھی کسی دل میں ہم بھی ہوں

    اک روز سوز و ساز کی محفل میں ہم بھی ہوں

    دل ہو اسیر گیسوئے عنبر سرشت میں

    الجھے انہیں حسین سلاسل میں ہم بھی ہوں

    چھیڑا ہے ساز حضرت سعدیؔ نے جس جگہ

    اس بوستاں کے شوخ عنادل میں ہم بھی ہوں

    گائیں ترانے دوش ثریا پہ رکھ کے سر

    تاروں سے چھیڑ ہو مہ کامل میں ہم بھی ہوں

    آزاد ہو کے کشمکش علم سے کبھی

    آشفتگان عشق کی منزل میں ہم بھی ہوں

    دیوانہ وار ہم بھی پھریں کوہ و دشت میں

    دلدادگان شعلۂ محمل میں ہم بھی ہوں

    دل کو ہو شاہزادیٔ مقصد کی دھن لگی

    حیراں سراغ جادۂ منزل میں ہم بھی ہوں

    صحرا ہو، خار زار ہو، وادی ہو، آگ ہو

    اک دن انہیں مہیب منازل میں ہم بھی ہوں

    دریائے حشر خیز کی موجوں کو چیر کر

    کشتی سمیت دامن ساحل میں ہم بھی ہوں

    اک لشکر عظیم ہو مصروف کارزار

    لشکر کے پیش پیش مقابل میں ہم بھی ہوں

    چمکے ہمارے ہاتھ میں بھی تیغ آب دار

    ہنگام جنگ نرغۂ باطل میں ہم بھی ہوں

    قدموں پہ جن کے تاج ہیں اقلیم دہر کے

    ان چند کشتگان غم دل میں ہم بھی ہوں

    مآخذ:

    • Book: Aahang (Pg. 103)
    • Author: Asrar-ul-Haq Majaz
    • مطبع: National Council for Promotion of Urdu Language, Delhi (2011)
    • اشاعت: 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY