تو کیا مرنا بھی اب ممکن نہیں ہے

شارق کیفی

تو کیا مرنا بھی اب ممکن نہیں ہے

شارق کیفی

MORE BY شارق کیفی

    تو کیا مرنا بھی اب ممکن نہیں ہے؟

    یہ میں ہوں کیا؟

    جو سب ہم راہیوں سے

    بے سبب لڑتا جھگڑتا پھر رہا ہوں

    سیٹ کی خاطر

    اک ایسی ٹرین میں

    چنا تھا جس کو تھوڑی دیر پہلے

    خودکشی کرنے کو میں نے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY