تم کہاں ہو

محبوب خزاں

تم کہاں ہو

محبوب خزاں

MORE BY محبوب خزاں

    میں تمہاری روح کی انگڑائیوں سے آشنا ہوں

    میں تمہاری دھڑکنوں کے زیر و بم پہچانتا ہوں

    میں تمہاری انکھڑیوں میں نرم لہریں جاگتی سی دیکھتا ہوں

    جیسے جادو جاگتا ہو

    تم امر ہو تو لچکتی ٹہنیوں کی مامتا ہو

    تم جوانی ہو تبسم ہو محبت کی لتا ہو

    میں تمہیں پہچانتا ہوں تم مری پہلی خطا ہو

    لہلہاتی جھومتی پھلواریوں کی تازگی ہو بے ادائی کی ادا ہو

    تیز منڈلاتی ابابیلوں کے ننھے بازوؤں کا حوصلہ ہو

    پھول ہو اور پھول کے انجام سے نا آشنا ہو

    ڈالیوں پر پھولتی ہو جھولتی ہو دیکھتی ہو بھولتی ہو

    ہر نئے فانوس پہ گرتی ہوئی پروانگی ہو

    اور خود بھی روشنی ہو

    زندگی ہو زندگی کے گرد چکر کاٹتی ہو

    میں تمہیں پہچانتا ہوں تم محبت چاہتی ہو

    خود کو دیکھو اور بھری دنیا کو دیکھو اور سوچو

    اور سوچو تم کہاں ہو

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY