تم نہیں آئے تھے جب

علی سردار جعفری

تم نہیں آئے تھے جب

علی سردار جعفری

MORE BYعلی سردار جعفری

    تم نہیں آئے تھے جب تب بھی تو موجود تھے تم

    آنکھ میں نور کی اور دل میں لہو کی صورت

    درد کی لو کی طرح پیار کی خوشبو کی طرح

    بے وفا وعدوں کی دل داری کا انداز لیے

    تم نہیں آئے تھے جب تب بھی تو تم آئے تھے

    رات کے سینے میں مہتاب کے خنجر کی طرح

    صبح کے ہاتھ میں خورشید کے ساغر کی طرح

    شاخ خوں رنگ تمنا میں گل تر کی طرح

    تم نہیں آؤ گے جب تب بھی تو تم آؤ گے

    یاد کی طرح دھڑکتے ہوئے دل کی صورت

    غم کے پیمانۂ سر شار کو چھلکاتے ہوئے

    برگ ہائے لب و رخسار کو مہکاتے ہوئے

    دل کے بجھتے ہوئے انگارے کو دہکاتے ہوئے

    زلف در زلف بکھر جائے گا پھر رات کا رنگ

    شب تنہائی میں بھی لطف ملاقات کا رنگ

    روز لائے گی صبا کوئے صباحت سے پیام

    روز گائے گی سحر تہنیت جشن فراق

    آؤ آنے کی کریں باتیں کہ تم آئے ہو

    اب تم آئے ہو تو میں کون سی شے نذر کرو

    کہ مرے پاس بجز مہر و وفا کچھ بھی نہیں

    ایک خوں گشتہ تمنا کے سوا کچھ بھی نہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    RECITATIONS

    علی سردار جعفری

    علی سردار جعفری

    علی سردار جعفری

    تم نہیں آئے تھے جب علی سردار جعفری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY