Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

تمہاری وجہ سے

شہناز پروین شازی

تمہاری وجہ سے

شہناز پروین شازی

MORE BYشہناز پروین شازی

    اگرچہ یہ سچ ہے

    کئی بار دل میرا بے حد دکھا ہے تمہاری وجہ سے

    کئی بار پلکوں پہ آئے ہیں آنسو تمہاری وجہ سے

    کئی بار سہنی پڑی سخت لہجے کی تیزی و تندی تمہاری وجہ سے

    کئی مرتبہ نا مناسب رویہ بھی جھیلا ہے میں نے تمہاری وجہ سے

    کئی بار بے بات غصہ کی زد پر بھی آنا پڑا ہے تمہاری وجہ سے

    کئی مرتبہ عزت نفس کو طاق پر رکھ کے سوری بھی کہنا پڑا ہے تمہاری وجہ سے

    تو یہ بھی تو سچ ہے

    جو اس پہلے سچ سے کہیں معتبر ہے بڑا دل نشیں ہے

    کہ اکثر ملا ہے مرے غم کو مرہم تمہاری وجہ سے

    کئی بار میں روتے روتے ہنسی ہوں تمہاری وجہ سے

    مرے آنسوؤں کو میسر ہوا ایک بر وقت کندھا تمہاری وجہ سے

    کئی بار افسردگی کے سمندر میں گرنے سے پہلے بچائی گئی ہوں تمہاری وجہ سے

    ہنر ضبط گریہ کا در آیا مجھ میں تمہاری وجہ سے

    ہوئے وا شعور غم زیست کے در تمہاری وجہ سے

    اجاگر ہوا مجھ میں احساس ہستی تمہاری وجہ سے

    ہوا منکشف لفظ اخلاص مجھ پہ تمہاری وجہ سے

    ہوا فہم و ادراک سچی خوشی کا تمہاری وجہ سے

    تمہاری وجہ سے ہی مسرور و شاداب رہنے لگی ہوں

    اگرچہ میں اندر سے ٹوٹی ہوئی ہوں

    مگر پھر بھی اب تک جو بکھری نہیں ہوں تمہاری وجہ سے

    یہ سچ ہے مرے دوست میں جی رہی ہوں تمہاری وجہ سے

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے