ابال

عمیق حنفی

ابال

عمیق حنفی

MORE BY عمیق حنفی

    یہ ہانڈی ابلنے لگی

    یہ مٹی کی ہانڈی ابلنے لگی ہے

    یہ مٹی کی دیوانی ہانڈی ابلنے لگی ہے

    ہزاروں برس سے مری آتما اونگھ میں پھنس گئی تھی

    جب انسان دو پتھروں کو رگڑ کر کہن سال سورج کی سرخ آتما کو بلانے لگا تھا

    مگر تیز آنچ اور بہت تیز بو نے جھنجھوڑا تو اب آنکھ پھاڑے ہوئے

    دم بخود ہے

    ابلنے لگیں سبزیاں پھول پھل گوشت دالیں اناج

    ابھی شوربے کے کھدکنے کی آواز چھائی ہوئی تھی

    ابھی سانپ چھتری لگائے ہوئے بھاپ نیلے خلاؤں کی جانب رواں ہے

    وہ جس کی ضیافت کی تیاریاں تھیں کہاں ہے

    مری آتما جاگ کر چیختی ہے

    یہ ہانڈی ابلنے لگی ہے

    یہ مٹی کی ہانڈی ابلنے لگی ہے

    یہ مٹی کی دیوانی ہانڈی ابلنے لگی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ابال نعمان شوق

    مآخذ:

    • Book: Intekhaab amiiq hanfii (Pg. 38)
    • Author: shamiim hanfii
    • مطبع: urdu academy (1995)
    • اشاعت: 1995

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites