الجھنیں

کیفی اعظمی

الجھنیں

کیفی اعظمی

MORE BYکیفی اعظمی

    زباں کو ترجمان غم بناؤں کس طرح کیفیؔ

    میں برگ گل سے انگارے اٹھاؤں کس طرح کیفیؔ

    سمجھ میں کس کی آئے راز میرے ہچکچانے کا

    اندھیرے میں چلا کرتا ہے ہر ناوک زمانے کا

    نگاہ مست کی اللہ رے معصوم تاکیدیں

    مجھے ہے حکم ساز مفلسی پر گنگنانے کا

    میں ساز مفلسی پر گنگناؤں کس طرح کیفیؔ

    ہنسی بھی میری نوحہ ہے مرا نغمہ بھی ماتم ہے

    جنوں بھی مجھ سے برہم ہے خرد بھی مجھ سے برہم ہے

    سلگتا شوق پگھلتے ولولے جلتی تمنائیں

    زمیں میری جہنم ہے فلک میرا جہنم ہے

    خیالی جنتوں میں بیٹھ جاؤں کس طرح کیفیؔ

    یہ طوق بندگی وہ پھول سی گردن معاذ اللہ

    وہ شہد آلود لب اور تلخئ شیون معاذ اللہ

    کمال حسن اور یہ انکسار عشق ارے توبہ

    وہ نازک ہاتھ میرا گوشۂ دامن معاذ اللہ

    جھٹک کر گوشۂ دامن چھڑاؤں کس طرح کیفیؔ

    نوید صبح سنتا ہی نہیں رنگین خواب اس کا

    گھرا جاتا ہے ظلمت ریز کرنوں میں شباب اس کا

    مجھے فرصت نہیں رنگینیوں میں ڈوب جانے کی

    اسے دیتا یہ دھوکا اعتبار انتخاب اس کا

    حقیقت مست آنکھوں کو دکھاؤں کس طرح کیفیؔ

    فنا میں حزن دیدہ زندگی ضم ہوتی جاتی ہے

    تھکی نبضوں کی خستہ ضرب مدھم ہوتی جاتی ہے

    یہ ارمانوں کا موسم یہ مری گرتی ہوئی صحت

    اندھیری رات اور لو شمع کی کم ہوتی جاتی ہے

    شبستان وفا کو جگمگاؤں کس طرح کیفیؔ

    نرالی جست کرنا ہے نئے رستے پہ چلنا ہے

    نئے شعلوں میں تپنا ہے نئے سانچے میں ڈھلنا ہے

    یہی دو چار سانسیں جو ابھی مجھ کو سنبھالے ہیں

    انہیں دو چار سانسوں میں زمانے کو بدلنا ہے

    انہیں بھی سرد گیتوں میں گنواؤں کس طرح کیفیؔ

    پریشاں قافلے نے اب نشاں منزل کا پایا ہے

    دھندلکوں کے ادھر اک سرخ تارا جھلملایا ہے

    چلے ہیں ہانپتے انساں نئی دنیا بسانے کو

    بہت ایسے ہیں ان میں جن کو خود میں نے بڑھایا ہے

    میں خود ہی راستے سے لوٹ آؤں کس طرح کیفیؔ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY