وقفہ

شاہد ماہلی

وقفہ

شاہد ماہلی

MORE BY شاہد ماہلی

    سرد راتوں کی گرمی

    جھلستے دنوں کی ہوا لے گئی

    ریگزاروں پہ

    بارود کی بو سے جھلسے ہوئے خشک پتے

    بکھرنے لگے

    چیختے آگ اگلتے گرجتے ہوئے

    زہر آلود لہجے

    اچانک بدلنے لگے

    پیلی آنکھوں سے تاریک چشمے اترنے لگے

    سارے اخبار کی سرخیاں گھٹ گئیں

    سہمی سہمی زمیں اپنی آغوش میں

    ٹوٹے پھوٹے گھروندے چھپائے ہوئے

    ہانپتی کانپتی

    کھیل کے اک نئے دور کی منتظر

    اپنے بیٹوں کی گنتی میں مصروف ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY