وہ لمحہ جو میرا تھا

ادا جعفری

وہ لمحہ جو میرا تھا

ادا جعفری

MORE BYادا جعفری

    اک دن

    تم نے مجھ سے کہا تھا

    دھوپ کڑی ہے

    اپنا سایہ ساتھ ہی رکھنا

    وقت کے ترکش میں جو تیر تھے کھل کر برسے ہیں

    زرد ہوا کے پتھریلے جھونکوں سے

    جسم کا پنچھی گھایل ہے

    دھوپ کا جنگل پیاس کا دریا

    ایسے میں آنسو کی اک اک بوند کو

    انساں ترسے ہیں

    تم نے مجھ سے کہا تھا

    سمے کی بہتی ندی میں

    لمحے کی پہچان بھی رکھنا

    میرے دل میں جھانک کے دیکھو

    دیکھو ساتوں رنگ کا پھول کھلا ہے

    وہ لمحہ جو میرا تھا وہ میرا ہے

    وقت کے پیکاں بے شک تن پر آن لگے

    دیکھو اس لمحے سے کتنا گہرا رشتہ ہے

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    وہ لمحہ جو میرا تھا عذرا نقوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY