یاد وطن

MORE BYشفیق فاطمہ شعریٰ

    پودے نہیں اکیلے

    چھایا ہے ان کی سنگی ساتھی

    پر آتما اکیلی

    وادی کی گود میں چاند

    درپن اچھالتا ہے

    چاندی کا جگمگاتا

    وہ جھلملاتا منڈوا

    خوشہ سا کھل اٹھا ہے

    اس میں جنونی تارا

    پربت نہیں اکیلے چلتے

    چلتے ہیں ساتھ ان کے

    وحشی ہوا کے جھونکے ریلے

    پر آتما اکیلی

    گاتی ہے جب یہ دھرتی

    ساتھ اس کے گونجتی ہے

    اک صورت سرمدی بھی

    ساگر لہر لہر میں

    بیلا چرا رہا ہے

    نر ناری کے ملن کی

    دریا نہیں اکیلے بہتے

    بہتی ہیں ساتھ ان کے

    موجیں

    ان کی

    پر آتما اکیلی

    مأخذ :
    • کتاب : Silsila-e-makalmat (Pg. 350)
    • Author : Shafique Fatma Shora
    • مطبع : Educational Publishing House (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY