یار لوگ

MORE BYاحمد ندیم قاسمی

    INTERESTING FACT

    (فنون، لاہور، جون 1973)

    یوم مزاجی یاروں کی

    سب میری دیکھی بھالی

    رات کی تاریکی میں

    ان کی انگارہ سی آنکھیں

    پوری

    دن کو اندھی اور ادھوری

    خالی

    دن کے یہ درویش مگر راتوں کے والی

    اپنے محسن کو جب

    دن کے آئینے میں دیکھیں

    فرط ادب سے سمٹیں سکڑیں جھک جائیں

    اور کچلے مسئلے روندے لہجے میں پوچھیں

    کیسا ہے مزاج عالی

    رات کو لیکن

    پیار کا رستہ کاٹ کے نکلیں

    جیسے بلی کالی

    ان کی ہے بس ایک نشانی

    گالی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY