زبان درگور

عظیم الدین احمد

زبان درگور

عظیم الدین احمد

MORE BY عظیم الدین احمد

    صبا اس سے یہ کہہ جو اس طرف ہو کر گزرتا ہو

    قدم او جانے والے روک میرا حال سنتا جا

    کبھی میں بھی جواں تھا میں بھی حسن و علم رکھتا تھا

    وہی میں ہوں مجھے اب دیکھ اگر چشم تماشا ہو

    جوانی کی امنگیں شوق علمی ذہن و طباعی

    ذکاوت حوصلہ حلم و مروت رحم و غم خواری

    خیال اقربا احباب کے عیبوں کی ستاری

    قناعت دوست مجھ سے دور کوسوں بغض و طماعی

    غرض ایسی بہت سی خوبیاں تھیں موت نے لیکن

    بنا ڈالا مرے آتش کدے کو خاک کا تودا

    شراروں کے عوض اب بہہ رہا ہے برف کا دریا

    مسافر غور سے سن گور سے بچنا ہے نا ممکن

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY