aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

زہر کا سفر

سجاد باقر رضوی

زہر کا سفر

سجاد باقر رضوی

MORE BYسجاد باقر رضوی

    میں انسان ہوں

    میں نے اک ناگن کو ڈسا

    اس کو اپنا زہر دیا

    ایسا زہر کہ جس کا منتر کوئی نہیں

    اس کی رگ رگ میں چنگاری

    اس کے لہو میں آگ

    میرے زہر میں نشہ بھی ہے

    ایسا نشہ جس کا کوئی خمار نہیں

    وہ ناگن اب مست نشے میں جھومے گی

    بہک بہک کر ہر سو مجھ کو ڈھونڈے گی

    اس کی زباں باہر کو نکلی

    اس کے منہ میں جھاگ

    آج ہے لوگو پورن ماشی

    زخمی ناگن زہر اگلتی

    انسانوں کو ڈس کے ان کے خون میں اپنا زہر بھرے گی

    ایسا زہر کہ جس کا منتر کوئی نہیں

    ان کی رگ رگ میں چنگاری

    ان کے لہو میں آگ

    اس کی زباں باہر کو نکلی

    اس کے منہ میں جھاگ

    مجھ کو ڈس کر میرے خون کو واپس میرا زہر کرے گی

    میری رگ رگ میں چنگاری

    میرے لہو میں آگ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے