Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

زیادہ پاس مت آنا

رحمان فارس

زیادہ پاس مت آنا

رحمان فارس

MORE BYرحمان فارس

    زیادہ پاس مت آنا

    میں وہ تہہ خانہ ہوں جس میں

    شکستہ خواہشوں کے ان گنت آسیب بستے ہیں

    جو آدھی شب تو روتے ہیں پھر آدھی رات ہنستے ہیں

    مری تاریکیوں میں

    گمشدہ صدیوں کے گرد آلود نا آسودہ خوابوں کے

    کئی عفریت بستے ہیں

    مری خوشیوں پہ روتے ہیں مرے اشکوں پہ ہنستے ہیں

    مرے ویران دل میں رینگتی ہیں مکڑیاں غم کی

    تمناؤں کے کالے ناگ شب بھر سرسراتے ہیں

    گناہوں کے جنے بچھو

    دموں پر اپنے اپنے ڈنک لادے

    اپنے اپنے زہر کے شعلوں میں جلتے ہیں

    یہ بچھو دکھ نگلتے اور پچھتاوے اگلتے ہیں

    زیادہ پاس مت آنا

    میں وہ تہہ خانہ ہوں جس میں

    کوئی روزن کوئی کھڑکی نہیں باقی

    فقط قبریں ہی قبریں ہیں

    کہیں ایسا نہ ہو تم بھی انہی قبروں میں کھو جاؤ

    انہی میں دفن ہو جاؤ

    گلابی ہو کہیں ایسا نہ ہو تم زرد ہو جاؤ

    محبت کی حرارت کھو کے بالکل سرد ہو جاؤ

    سراپا درد ہو جاؤ

    سو میرے سادہ و معصوم مجھ کو راس مت آنا

    زیادہ پاس مت آنا

    زیادہ پاس مت آنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے