Munawwr Badayuni's Photo'

منور بدایونی

1908 - 1984 | بدایوں, انڈیا

منور بدایونی کے شعر

پیچھے مڑ مڑ کر نہ دیکھو اے منورؔ بڑھ چلو

شہر میں احباب تو کم ہیں سگے بھائی بہت

جو دل کو دے گئی اک درد عمر بھر کے لیے

تڑپ رہا ہوں ابھی تک میں اس نظر کے لیے

اب کنج لحد میں ہوں میسر نہیں آنسو

آیا ہے شب ہجر کا رونا مرے آگے

علاج کی نہیں حاجت دل و جگر کے لیے

بس اک نظر تری کافی ہے عمر بھر کے لیے

نظر آتی ہیں سوئے آسماں کبھی بجلیاں کبھی آندھیاں

کہیں جل نہ جائے یہ آشیاں کہیں اڑ نہ جائیں یہ چار پر

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

بولیے