noImage

تابش ہمدون عثمانی

1934 - 1992

تابش ہمدون عثمانی کی اشعار

یخ بستہ ہو چکی ہیں امیدوں کی بستیاں

ان میں ترے بدن کی حرارت کہاں سے لائیں

تشنہ لبی رہین مے تلخ ہے تو کیا

شیرینیٔ حیات کی لذت کہاں سے لائیں