Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر
Ziauddin Ahmad Shakeb's Photo'

ضیا الدین احمد شکیب

1933 - 2021 | لندن, برطانیہ

ہند ایران تعلقات کے معروف مورخ، قدیم عربی فارسی مخطوطوں کے ماہر

ہند ایران تعلقات کے معروف مورخ، قدیم عربی فارسی مخطوطوں کے ماہر

ضیا الدین احمد شکیب کے اشعار

595
Favorite

باعتبار

دیوانۂ جستجو ہو گیا چاند

بادل سے گر کے کھو گیا چاند

عقل کچھ زیست کی کفیل نہیں

زندگی اتنی بے سبیل نہیں

آپ کے ساتھ مسکرانے میں

زندگی ایک پھول ہوتی ہے

مختصر بات چیت اچھی ہے

لیکن اتنا بھی اختصار نہ کر

عارض سے ترے صبح کی تہمت نہ اٹھے گی

زلفوں پہ تری شام کا الزام رہے گا

فکر مندی فضول ہوتی ہے

کوشش دل قبول ہوتی ہے

میری تجویز پر خفا کیوں ہو

بات کچھ عقل کے خلاف نہیں

ہمیں بھی ضرورت تھی اک شخص کی

یہ حسن تصادم بہت خوب ہے

اسی طرح باتیں کئے جائیے

یہ طرز تکلم بہت خوب ہے

یقیں گر کرو تم بہت خوب ہے

یہ بے جا تبسم بہت خوب ہے

اتنے نادم نہ ہوئیے آخر

اچھے اچھوں سے بھول ہوتی ہے

پڑتی نہیں ہے دل پہ ترے حسن کی کرن

کس سمت میرے چاند درخشاں ہے آج کل

ہم سے واعظ نے بات کی ہوتی

گمرہی اپنی بے دلیل نہیں

جب تک کہ محبت کا چلن عام رہے گا

ہر لب پہ مرا ذکر مرا نام رہے گا

گو انہیں راہ انحراف نہیں

پھر بھی امید اعتراف نہیں

جنوں شعلہ ساماں خرد شبنم افشاں

خدا جانے یہ جان جیتے کہ ہارے

گوش مشتاق صدائے نالۂ دل اب کہاں

شعر اگر دل کے لہو میں ڈوب کر نکلے تو کیا

پاس پندار طبیعت دل اگر رکھ لے تو کیا

ہے وجود درد محکم ضبط غم کر لے تو کیا

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے