بس کہ فعال ما یرید ہے آج

مرزا غالب

بس کہ فعال ما یرید ہے آج

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    INTERESTING FACT

    ۱۸۵۷ء

    بس کہ فعال ما یرید ہے آج

    ہر سلح شور انگلستاں کا

    گھر سے بازار میں نکلتے ہوئے

    زہرہ ہوتا ہے آب انساں کا

    چوک جس کو کہیں وہ مقتل ہے

    گھر بنا ہے نمونہ زنداں کا

    شہر دہلی کا ذرہ ذرہ خاک

    تشنۂ خوں ہے ہر مسلماں کا

    کوئی واں سے نہ آ سکے یاں تک

    آدمی واں نہ جا سکے یاں کا

    میں نے مانا کہ مل گئے پھر کیا

    وہی رونا تن و دل و جاں کا

    گاہ جل کر کیا کیے شکوہ

    سوزش داغ ہائے پنہاں کا

    گاہ رو کر کہا کیے باہم

    ماجرا دیدہ ہائے گریاں کا

    اس طرح کے وصال سے یا رب

    کیا مٹے دل سے داغ ہجراں کا

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib (Pg. 470)

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY