آج دی تعلیم گت گت کی مجھے تالوں کے بیچ

محسن خان محسن

آج دی تعلیم گت گت کی مجھے تالوں کے بیچ

محسن خان محسن

MORE BYمحسن خان محسن

    آج دی تعلیم گت گت کی مجھے تالوں کے بیچ

    اب نہ آؤں گی کبھی استاد کی چالوں کے بیچ

    چوم کر زلف دوتا پھنستا نہیں جالوں کے بیچ

    صاف بچ جاتا ہے گورا سیکڑوں کالوں کے بیچ

    میں تو خود کہتی ہوں باجی خاک ڈالوں شیخ پر

    پھانس لیتا ہے نگوڑا پیار کی چالوں کے بیچ

    بھولا پن خود کر رہا ہے سرخیٔ لب سے حضور

    سوت کی بیڑی بھری ہے آج ان گالوں کے بیچ

    ہوتے تھے دو چار دولہا پہلے کیا کیا پیار سے

    بگڑے اب کیا کیا بوا دو چار ہی سالوں کے بیچ

    نوج لوں شالیں کسی کی میں بوا شل ہو گئی

    بھیجے خط سوکن کے مجھ کو ڈال کر شالوں کے بیچ

    اپنی بدحالی پہ گوئیاں تھا فلک نالہ کناں

    آج پھر شکر خدا ہم بھی ہیں خوشحالوں کے بیچ

    بات ہے بگڑی گھڑی کی صاف جو ہوتے نہیں

    چلتے پرزے ہیں مجھے لاتے ہیں وہ چالوں کے بیچ

    سنتے ہی بے چین ہو کر آ گئے ڈولی میں ہم

    کس بلا کا ہے اثر محسنؔ ترے نالوں کے بیچ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY