مشہور نظمیں

نظموں کا وسیع ذخیرہ-اردو

شاعری کی ایک صنف اردو میں نظم کی صنف انیسویں صدی کی آخری دہائیوں کے دوران انگریزی کے اثر سے پیدا ہوئی جو دھیرے دھیرے پوری طرح قائم ہو گئی۔ نظم بحر اور قافیے میں بھی ہوتی ہے اور اس کے بغیر بھی۔ اب نثری نظم بھی اردو میں مستحکم ہو گئی ہے۔

64.7K
Favorite

باعتبار

ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں

ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں ہر کام کرنے میں

منیر نیازی

شکوہ

کیوں زیاں کار بنوں سود فراموش رہوں

علامہ اقبال

رقیب سے!

آ کہ وابستہ ہیں اس حسن کی یادیں تجھ سے

فیض احمد فیض

آوارہ

شہر کی رات اور میں ناشاد و ناکارا پھروں

اسرار الحق مجاز

تاج محل

تاج تیرے لیے اک مظہر الفت ہی سہی

ساحر لدھیانوی

عورت

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

کیفی اعظمی

نثار میں تیری گلیوں کے

نثار میں تری گلیوں کے اے وطن کہ جہاں

فیض احمد فیض

آج بازار میں پا بہ جولاں چلو

چشم نم جان شوریدہ کافی نہیں

فیض احمد فیض

فرض کرو

فرض کرو ہم اہل وفا ہوں، فرض کرو دیوانے ہوں

ابن انشا

یاد

دشت تنہائی میں اے جان جہاں لرزاں ہیں

فیض احمد فیض

زندگی سے ڈرتے ہو

زندگی سے ڈرتے ہو؟

ن م راشد

شاید

میں شاید تم کو یکسر بھولنے والا ہوں

جون ایلیا

تنہائی

پھر کوئی آیا دل زار نہیں کوئی نہیں

فیض احمد فیض

جاوید کے نام

دیار عشق میں اپنا مقام پیدا کر

علامہ اقبال

ہم جو تاریک راہوں میں مارے گئے

تیرے ہونٹوں کے پھولوں کی چاہت میں ہم

فیض احمد فیض

وصال کی خواہش

کہہ بھی دے اب وہ سب باتیں

منیر نیازی

اعتراف

اب مرے پاس تم آئی ہو تو کیا آئی ہو

اسرار الحق مجاز

متاع غیر

میرے خوابوں کے جھروکوں کو سجانے والی

ساحر لدھیانوی

فرمان خدا

اٹھو مری دنیا کے غریبوں کو جگا دو

علامہ اقبال

اب سو جاؤ

اب سو جاؤ

فہمیدہ ریاض

دائرہ

روز بڑھتا ہوں جہاں سے آگے

کیفی اعظمی

چکلے

یہ کوچے یہ نیلام گھر دل کشی کے

ساحر لدھیانوی

نوجوان خاتون سے

حجاب فتنہ پرور اب اٹھا لیتی تو اچھا تھا

اسرار الحق مجاز

ہراس

تیرے ہونٹوں پہ تبسم کی وہ ہلکی سی لکیر

ساحر لدھیانوی

آخری دن کی تلاش

خدا نے قرآن میں کہا ہے

محمد علوی

ساقی نامہ

ہوا خیمہ زن کاروان بہار

علامہ اقبال

جشن غالب

اکیس برس گزرے آزادئ کامل کو

ساحر لدھیانوی

جبریل و ابلیس

جبرئیل

علامہ اقبال

مسجد قرطبہ

سلسلۂ روز و شب نقش گر حادثات

علامہ اقبال

التجائے مسافر

فرشتے پڑھتے ہیں جس کو وہ نام ہے تیرا

علامہ اقبال

(1) حسن کوزہ گر

جہاں زاد نیچے گلی میں ترے در کے آگے

ن م راشد

ملاقات

یہ رات اس درد کا شجر ہے

فیض احمد فیض

کس سے محبت ہے

بتاؤں کیا تجھے اے ہم نشیں کس سے محبت ہے

اسرار الحق مجاز

آخری عمر کی باتیں

وہ میری آنکھوں پر جھک کر کہتی ہے ''میں ہوں''

منیر نیازی

نانک

قوم نے پیغام گوتم کی ذرا پروا نہ کی

علامہ اقبال

فن پارہ

یہ کتابوں کی صف بہ صف جلدیں

جون ایلیا

تصویر درد

نہیں منت کش تاب شنیدن داستاں میری

علامہ اقبال

آدمی کی تلاش

ابھی مرا نہیں زندہ ہے آدمی شاید

ندا فاضلی

زنداں کی ایک شام

شام کے پیچ و خم ستاروں سے

فیض احمد فیض

فن کار

میں نے جو گیت ترے پیار کی خاطر لکھے

ساحر لدھیانوی

تم نہیں آئے تھے جب

تم نہیں آئے تھے جب تب بھی تو موجود تھے تم

علی سردار جعفری

والدہ مرحومہ کی یاد میں

ذرہ ذرہ دہر کا زندانیٔ تقدیر ہے

علامہ اقبال

مرزا غالبؔ

فکر انساں پر تری ہستی سے یہ روشن ہوا

علامہ اقبال

بیٹھا ہے میرے سامنے وہ

بیٹھا ہے میرے سامنے وہ

فہمیدہ ریاض

میں اور میرا خدا

لاکھوں شکلوں کے میلے میں تنہا رہنا میرا کام

منیر نیازی

ایک درخواست

زندگی کے جتنے دروازے ہیں مجھ پہ بند ہیں

احمد ندیم قاسمی

آدھا کمرہ

اس نے اتنی کتابیں چاٹ ڈالیں

سارا شگفتہ

ابھی کچھ دن لگیں گے

ابھی کچھ دن لگیں گے

افتخار عارف

شکست

اپنے سینے سے لگائے ہوئے امید کی لاش

ساحر لدھیانوی