محبوب پر تصویری شاعری

محبوب کے بارے میں کون

سننا یا کچھ سنانا نہیں چاہتا ۔ ایک عاشق کے لئے یہی سب کچھ ہے کہ محبوب کی باتیں ہوتی رہیں اور اس کا تذکرہ چلتا رہے ۔ محبوب کے تذکرے کی اس روایت میں ہم بھی اپنی حصے داری بنا رہے ہیں ۔ ہمارا یہ چھوٹا سا انتخاب پڑھئے جو محبوب کی مختلف جہتوں کو موضوع بناتا ہے ۔

تمہارے خط میں نیا اک سلام کس کا تھا

تم مخاطب بھی ہو قریب بھی ہو (ردیف .. ن)

کیا جانے اسے وہم ہے کیا میری طرف سے (ردیف .. ا)

کیا جانے اسے وہم ہے کیا میری طرف سے (ردیف .. ا)

تمہارے شہر کا موسم بڑا سہانا لگے

تمہارے شہر کا موسم بڑا سہانا لگے

چاند سا مصرعہ اکیلا ہے مرے کاغذ پر (ردیف .. و)

آہٹ سی کوئی آئے تو لگتا ہے کہ تم ہو

آہٹ سی کوئی آئے تو لگتا ہے کہ تم ہو

کیا جانے اسے وہم ہے کیا میری طرف سے (ردیف .. ا)

کیا جانے اسے وہم ہے کیا میری طرف سے (ردیف .. ا)

ہم خدا کے کبھی قائل ہی نہ تھے (ردیف .. ا)

کیا جانے اسے وہم ہے کیا میری طرف سے (ردیف .. ا)

کیا جانے اسے وہم ہے کیا میری طرف سے (ردیف .. ا)

جب میں چلوں تو سایہ بھی اپنا نہ ساتھ دے

جب میں چلوں تو سایہ بھی اپنا نہ ساتھ دے

بولیے