Wali Aasi's Photo'

والی آسی

1939 - 2002 | لکھنؤ, ہندوستان

غزل 24

اشعار 19

انہیں بھی جینے کے کچھ تجربے ہوئے ہوں گے

جو کہہ رہے ہیں کہ مر جانا چاہتے ہیں ہم

ہم خون کی قسطیں تو کئی دے چکے لیکن

اے خاک وطن قرض ادا کیوں نہیں ہوتا

  • شیئر کیجیے

سگرٹیں چائے دھواں رات گئے تک بحثیں

اور کوئی پھول سا آنچل کہیں نم ہوتا ہے

کتاب 10

ارمغان نعت

 

1982

گل افشانیاں

 

1967

جواہر پارے

 

1965

مرزا غالب کے لطیفے

 

1968

مرزا غالب کے لطیفے

 

1985

موم

 

1999

رہبر ایشیا

مہاتما گاندھی شاعر کی نگاہ میں

1969

روشنی اے روشنی

 

 

شہد

 

1983

 

تصویری شاعری 4

جن کی یادیں ہیں ابھی دل میں نشانی کی طرح وہ ہمیں بھول گئے ایک کہانی کی طرح دوستو ڈھونڈ کے ہم سا کوئی پیاسا لاؤ ہم تو آنسو بھی جو پیتے ہیں تو پانی کی طرح غم کو سینے میں چھپائے ہوئے رکھنا یارو غم مہکتے ہیں بہت رات کی رانی کی طرح تم ہمارے تھے تمہیں یاد نہیں ہے شاید دن گزرتے ہیں برستے ہوئے پانی کی طرح آج جو لوگ ترے غم پہ ہنسے ہیں والیؔ کل تجھے یاد کریں_گے وہی فانیؔ کی طرح

 

ویڈیو 7

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر
Mere Fasane Ko Yun Lazawal

والی آسی

Musalla Rakhte HaiN

والی آسی

پھر وہی ریگ_بیاباں کا ہے منظر اور ہم

والی آسی

ہم اپنے_آپ پہ بھی ظاہر کبھی دل کا حال نہیں کرتے

والی آسی

آڈیو 7

بھولے_بسرے ہوئے غم یاد بہت کرتا ہے

بہ_رنگ_نغمہ بکھر جانا چاہتے ہیں ہم

بہت دن سے کوئی منظر بنانا چاہتے ہیں ہم

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

متعلقہ مصنفین

  • منور رانا منور رانا شاگرد
  • خمارؔ بارہ بنکوی خمارؔ بارہ بنکوی ہم عصر
  • خوشبیر سنگھ شادؔ خوشبیر سنگھ شادؔ شاگرد

"لکھنؤ" کے مزید مصنفین

  • نیر مسعود نیر مسعود
  • رجب علی بیگ سرور رجب علی بیگ سرور
  • عابد سہیل عابد سہیل
  • حیات اللہ انصاری حیات اللہ انصاری
  • عشرت ناہید عشرت ناہید
  • رام لعل رام لعل