عکس ابھرا نہ تھا آئینۂ دل داری کا

اعجاز گل

عکس ابھرا نہ تھا آئینۂ دل داری کا

اعجاز گل

MORE BYاعجاز گل

    عکس ابھرا نہ تھا آئینۂ دل داری کا

    ہجر نے کھینچ دیا دائرہ زنگاری کا

    ناز کرتا تھا طوالت پہ کہ وقت رخصت

    بھید سائے پہ کھلا شام کی عیاری کا

    جس قدر خرچ کیے سانس ہوئی ارزانی

    نرخ گرتا گیا رسم و رہ بازاری کا

    رات نے خواب سے وابستہ رفاقت کے عوض

    راستہ بند رکھا دن کی نموداری کا

    ایسا ویران ہوا ہے کہ خزاں روتی ہے

    کل بہت شور تھا جس باغ میں گل کاری کا

    بے سبب جمع تو کرتا نہیں تیر و ترکش

    کچھ ہدف ہوگا زمانے کی ستم گاری کا

    پا بہ زنجیر کیا تھا مجھے آسانی نے

    مرحلہ ہو نہ سکا طے کبھی دشواری کا

    مطمئن دل ہے عجب بھیڑ سے غم خواروں کی

    سلسلہ طول پکڑ لے نہ یہ بیماری کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY