چل رہا ہوں پیش و پس منظر سے اکتایا ہوا

اعجاز گل

چل رہا ہوں پیش و پس منظر سے اکتایا ہوا

اعجاز گل

MORE BYاعجاز گل

    چل رہا ہوں پیش و پس منظر سے اکتایا ہوا

    ایک سے دن رات کے چکر سے اکتایا ہوا

    بے دلی ہشیار پہنچی مجھ سے پہلے تھی وہاں

    میں گیا جس انجمن میں گھر سے اکتایا ہوا

    ہو نہیں پایا ہے سمجھوتہ کبھی دونوں کے بیچ

    جھوٹ اندر سے ہے سچ باہر سے اکتایا ہوا

    اب مزین ہے تلفظ سے عوام الناس کے

    شعر صرف و نحو کے چکر سے اکتایا ہوا

    خواہش ایجاد ہے اپنے معانی کی اسے

    لگ رہا یہ فعل ہے مصدر سے اکتایا ہوا

    چبھ رہے ہیں آنکھ میں خواب پریشاں رفت کے

    جسم ہے اس نیند کے بستر سے اکتایا ہوا

    عمر لیکن رائیگاں کی اس کے جمع و خرچ میں

    تھا ہمیشہ ذہن چیزے زر سے اکتایا ہوا

    آج پھر پڑھتا ہوں مکتب میں نئے استاد سے

    کل تھا جن اسباق کے ازبر سے اکتایا ہوا

    ذات اپنی ان میں رکھتا ہوں برابر منقسم

    دل مرا ہے بحث خیر و شر سے اکتایا ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY