دل کے بہلانے کی تدبیر تو ہے

شکیل بدایونی

دل کے بہلانے کی تدبیر تو ہے

شکیل بدایونی

MORE BYشکیل بدایونی

    دل کے بہلانے کی تدبیر تو ہے

    تو نہیں ہے تری تصویر تو ہے

    ہم سفر چھوڑ گئے مجھ کو تو کیا

    ساتھ میرے مری تقدیر تو ہے

    قید سے چھوٹ کے بھی کیا پایا

    آج بھی پاؤں میں زنجیر تو ہے

    کیا مجال ان کی نہ دیں خط کا جواب

    بات کچھ باعث تاخیر تو ہے

    پرسش حال کو وہ آ ہی گئے

    کچھ بھی ہو عشق میں تاثیر تو ہے

    غم کی دنیا رہے آباد شکیلؔ

    مفلسی میں کوئی جاگیر تو ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY