غزل میں حسن کا اس کے بیان رکھنا ہے

حسن اکبر کمال

غزل میں حسن کا اس کے بیان رکھنا ہے

حسن اکبر کمال

MORE BYحسن اکبر کمال

    غزل میں حسن کا اس کے بیان رکھنا ہے

    کمال آنکھوں میں گویا زبان رکھنا ہے

    جہاز راں ہنر و حوصلہ نہ لے جا ساتھ

    ہوا کے رخ پہ اگر بادبان رکھنا ہے

    بھرا تو ہے مرا ترکش مگر یہ دل ہے گداز

    سو عمر بھر مجھے خالی کمان رکھنا ہے

    دیے بجھاتی رہی دل بجھا سکے تو بجھائے

    ہوا کے سامنے یہ امتحان رکھنا ہے

    بہت ہنسے مرے اس فیصلے پہ سایہ نشیں

    کہ سر پہ دھوپ کو اب سائبان رکھنا ہے

    ہو انتظار بہاراں جہاں نہ رنج خزاں

    کمالؔ ایسا بیاباں مکان رکھنا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Nai Pakistani Ghazal Naye Dastakhat (Pg. 42)
    • Author : Nishat Shahid
    • مطبع : Miaar Publications K 20 C Shaikh Saraye Phase2 New Delhi (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY