غبار ابر بن گیا کمال کر دیا گیا

احمد خیال

غبار ابر بن گیا کمال کر دیا گیا

احمد خیال

MORE BYاحمد خیال

    غبار ابر بن گیا کمال کر دیا گیا

    ہری بھری رتوں کو میری شال کر دیا گیا

    قدم قدم پہ کاسہ لے کے زندگی تھی راہ میں

    سو جو بھی اپنے پاس تھا نکال کر دیا گیا

    میں زخم زخم ہو گیا لہو وفا کو رو گیا

    لڑائی چھڑ گئی تو مجھ کو ڈھال کر دیا گیا

    گلاب رت کی دیویاں نگر گلاب کر گئیں

    میں سرخ رو ہوا اسے بھی لال کر دیا گیا

    تو آ کے مجھ کو دیکھ تو غبار کے حصار میں

    ترے فراق میں عجیب حال کر دیا گیا

    وہ زہر ہے فضاؤں میں کہ آدمی کی بات کیا

    ہوا کا سانس لینا بھی محال کر دیا گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے