ہم زمیں کا آتشیں ابھار دیکھتے رہے

قیصر خالد

ہم زمیں کا آتشیں ابھار دیکھتے رہے

قیصر خالد

MORE BYقیصر خالد

    ہم زمیں کا آتشیں ابھار دیکھتے رہے

    سہمے سہمے سے ہی بس غبار دیکھتے رہے

    شہرتیں، یہ دولتیں، یہ مسندیں، ملیں پہ ہم

    بے نیاز ہی رہے، ہزار دیکھتے رہے

    آخرش زمانہ ان کو چھوڑ آگے بڑھ گیا

    ہر قدم جو عزت و وقار دیکھتے رہے

    ان کو پھر اماں کہاں نصیب ہونی تھی، کہ جو

    ہر مقام سے رہ فرار دیکھتے رہے

    ایک ایک کر کے قتل ہو رہی تھی پھر بھی ہم

    اپنی خواہشوں کی اک قطار دیکھتے رہے

    ہے محافظ چمن کا مجرمانہ طور یہ

    نچ گئی کلی کلی پہ خار دیکھتے رہے

    سب سیاہ تھا کہیں نہ سب سفید، پھر بھی ہم

    لیل دیکھتے رہے، نہار دیکھتے رہے

    باہر اپنے خول سے نہ آ سکے تمام عمر

    ہم درون ذات خلفشار دیکھتے رہے

    حوصلہ نہ کاوشیں، عمل نہ ربط آسماں

    ہم کہ حسرتوں کا اک مزار دیکھتے رہے

    آفتاب و کہکشاں، یہ چاند، تارے دور سے

    روشنی کا بالیقیں مدار دیکھتے رہے

    اب گلہ ہے کیوں مدد کا آسماں سے، جب کہ ہم

    کایر ایسے تھے کہ خود پہ وار دیکھتے رہے

    تیرے بن حیات کی سوچ بھی گناہ تھی

    ہم قریب جاں ترا حصار دیکھتے رہے

    دوسروں کے حق کی وہ لڑائی لڑ سکیں گے کیا

    وہ جو اپنے آپ کو بھی خوار دیکھتے رہے

    خالدؔ ایسے بھی تو ہیں کنارے بیٹھ کر ہی جو

    بحر میں چڑھاؤ اور اتار دیکھتے رہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے