اک قصۂ طویل ہے افسانہ دشت کا

حسن عزیز

اک قصۂ طویل ہے افسانہ دشت کا

حسن عزیز

MORE BYحسن عزیز

    اک قصۂ طویل ہے افسانہ دشت کا

    آخر کہیں تو ختم ہو ویرانہ دشت کا

    مجھ کو بھی غرق بحر تماشا میں کر دیا

    اب حد سے بڑھتا جاتا ہے دیوانہ دشت کا

    تعویذ آب کے سوا چارہ نہیں کوئی

    آسیب تشنگی سے ہے یارانہ دشت کا

    تو نے شکست کھائی محاذ قیام پر

    اب سکۂ سفر میں دے ہرجانہ دشت کا

    ہوتا نہیں جو خالی کبھی جام آفتاب

    دن بھر ہی گرم رہتا ہے مے خانہ دشت کا

    اب ظلمتوں کا خوف نہیں خاک شہر کی

    روشن ہے شمع ریگ سے کاشانہ دشت کا

    آداب منصفی سے میں واقف نہیں حسنؔ

    شہر خطا میں کرتا ہوں جرمانہ دشت کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY