جدھر جاتے ہیں سب جانا ادھر اچھا نہیں لگتا

جاوید اختر

جدھر جاتے ہیں سب جانا ادھر اچھا نہیں لگتا

جاوید اختر

MORE BY جاوید اختر

    جدھر جاتے ہیں سب جانا ادھر اچھا نہیں لگتا

    مجھے پامال رستوں کا سفر اچھا نہیں لگتا

    غلط باتوں کو خاموشی سے سننا حامی بھر لینا

    بہت ہیں فائدے اس میں مگر اچھا نہیں لگتا

    مجھے دشمن سے بھی خودداری کی امید رہتی ہے

    کسی کا بھی ہو سر قدموں میں سر اچھا نہیں لگتا

    بلندی پر انہیں مٹی کی خوشبو تک نہیں آتی

    یہ وہ شاخیں ہیں جن کو اب شجر اچھا نہیں لگتا

    یہ کیوں باقی رہے آتش زنو یہ بھی جلا ڈالو

    کہ سب بے گھر ہوں اور میرا ہو گھر اچھا نہیں لگتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جاوید اختر

    جاوید اختر

    RECITATIONS

    سمیر کھیرا

    سمیر کھیرا

    سمیر کھیرا

    جدھر جاتے ہیں سب جانا ادھر اچھا نہیں لگتا سمیر کھیرا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites