جو ہے یاں آسائش رنج و محن میں مست ہے

بہرام جی

جو ہے یاں آسائش رنج و محن میں مست ہے

بہرام جی

MORE BYبہرام جی

    جو ہے یاں آسائش رنج و محن میں مست ہے

    کوچۂ جاناں میں ہم ہیں قیس بن میں مست ہے

    تیرے کوچے میں ہے قاتل رقص گاہ عاشقاں

    کوئی غلطاں سر بکف کوئی کفن میں مست ہے

    میکدے میں بادہ کش بت خانے میں ہیں بت پرست

    جو ہے عالم میں وہ اپنی انجمن میں مست ہے

    نکہت زلف صنم سے یاں معطر ہے دماغ

    کوئی مشک چیں کوئی مشک ختن میں مست ہے

    ہے کوئی محو نماز اور خمکدہ میں کوئی مست

    دل مرا عشق بتان دل شکن میں مست ہے

    ہے مسلماں کو ہمیشہ آب زمزم کی تلاش

    اور ہر اک برہمن گنگ و جمن میں مست ہے

    عکس روئے شمع رو ہے میرے دل میں جا گزیں

    دل مرا اس آتش لمعہ فگن میں مست ہے

    ہے مرا ہر شعر تر بہرامؔ کیسا پر اثر

    جس کو دیکھو مجلس اہل سخن میں مست ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے