محمل ہے مطلوب نہ لیلیٰ مانگتا ہے

اعجاز گل

محمل ہے مطلوب نہ لیلیٰ مانگتا ہے

اعجاز گل

MORE BYاعجاز گل

    محمل ہے مطلوب نہ لیلیٰ مانگتا ہے

    چاک گریباں قیس تو صحرا مانگتا ہے

    ہجر سر ویرانۂ جاں بھی مہر بلب

    وصل گلی کوچوں میں چرچا مانگتا ہے

    اس آئینہ خانے کا ہر رقص کناں

    اپنے سامنے اپنا تماشا مانگتا ہے

    ناامیدی لاکھ قفس ایجاد کرے

    طائر دل پرواز تمنا مانگتا ہے

    عمر بتاتا ہے امروز میں اور مکیں

    دروازے پر دستک فردا مانگتا ہے

    دھوپ جوانی کا یارانہ اپنی جگہ

    تھک جاتا ہے جسم تو سایہ مانگتا ہے

    باندھ سگ آوارہ چوکھٹ کے اندر

    ایک مسافر تجھ سے رستا مانگتا ہے

    لوگ طوالت سے گھبراتے ہیں ورنہ

    ایک زمانہ سیدھا رستا مانگتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY