میں آ رہا تھا ستاروں پہ پاؤں دھرتے ہوئے

طارق نعیم

میں آ رہا تھا ستاروں پہ پاؤں دھرتے ہوئے

طارق نعیم

MORE BYطارق نعیم

    میں آ رہا تھا ستاروں پہ پاؤں دھرتے ہوئے

    بدن اتار دیا خاک سے گزرتے ہوئے

    جمال مجھ پہ یہ اک دن میں تو نہیں آیا

    ہزار آئینے ٹوٹے مرے سنورتے ہوئے

    عجب نظر سے چراغوں کی سمت دیکھا ہے

    ہوا نے زینۂ پندار سے اترتے ہوئے

    اک آدھ جام تو پی ہی لیا تھا ہم نے بھی

    خمار خانۂ دنیا کی سیر کرتے ہوئے

    نہ جانے کیا دل صیاد میں خیال آیا

    وہ رو دیا تھا مرے بال و پر کترتے ہوئے

    اب آسمان بھی کم پڑ رہے ہیں اس کے لیے

    قدم زمین پر رکھا تھا جس نے ڈرتے ہوئے

    وہی ستارہ ستاروں کا حکمراں ٹھہرا

    لرز رہا تھا جو پہلی زقند بھرتے ہوئے

    وہ آئنہ تھا میں طارق نعیمؔ ٹوٹ کے بھی

    ہزار عکس بناتا گیا بکھرتے ہوئے

    مأخذ :
    • کتاب : ruki huii shamon kii raahdaariyaz (Pg. 19)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے