پردۂ ذہن سے سایہ سا گزر جاتا ہے

ممتاز میرزا

پردۂ ذہن سے سایہ سا گزر جاتا ہے

ممتاز میرزا

MORE BYممتاز میرزا

    پردۂ ذہن سے سایہ سا گزر جاتا ہے

    جیسے پل بھر کو مرا دل بھی ٹھہر جاتا ہے

    تیری یادوں کے دیے جب بھی جلاتا ہے یہ دل

    حسن کچھ اور شب غم کا نکھر جاتا ہے

    حسرتیں دل کی مجسم نہیں ہونے پاتیں

    خواب بننے نہیں پاتا کہ بکھر جاتا ہے

    رات بھیگے تو اک انجان سا بے نام سا درد

    چاندنی بن کے فضاؤں میں بکھر جاتا ہے

    رات کاٹے نہیں کٹتی ہے کسی صورت سے

    دن تو دنیا کے بکھیڑوں میں گزر جاتا ہے

    اس کو بھی کہتے ہیں ممتازؔ وفا کا نغمہ

    دل بیتاب میں گھٹ گھٹ کے جو مر جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے