رقص آشفتہ سری کی کوئی تدبیر سہی

عرشی بھوپالی

رقص آشفتہ سری کی کوئی تدبیر سہی

عرشی بھوپالی

MORE BYعرشی بھوپالی

    رقص آشفتہ سری کی کوئی تدبیر سہی

    لو مرے پاؤں میں اک اور بھی زنجیر سہی

    امتحاں اس دل پر شوق کا کرتے رہیے

    اور اس جرم وفا پر کوئی تعزیر سہی

    طعن و دشنام سے دیوانے نہ باز آئیں گے

    کوئی الزام سہی تہمت تقصیر سہی

    ہم تو آوارۂ صحرا ہیں ہمیں کیا مطلب

    ان کی محفل میں جنوں کی کوئی توقیر سہی

    ہر کوئی یوسف کنعاں تو نہیں بن سکتا

    میرا فردا ہی مرے خواب کی تعبیر سہی

    قافلے کتنے ہی منزل سے بھٹک جاتے ہیں

    ہم مسافر نہ سہی ہم کوئی رہگیر سہی

    نعرۂ زلف صنم شرط جنوں کیا معنی

    درد رسوا ہی سہی عشق جہانگیر سہی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY