تیرے خیال کے دیوار و در بناتے ہیں

جمیل الدین عالی

تیرے خیال کے دیوار و در بناتے ہیں

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    تیرے خیال کے دیوار و در بناتے ہیں

    ہم اپنے گھر میں بھی تیرا ہی گھر بناتے ہیں

    بجائے یوم ملامت رکھا ہے جشن مرا

    مرے بھی دوست مجھے کس قدر بناتے ہیں

    بکھیرتے رہو صحرا میں بیج الفت کے

    کہ بیج ہی تو ابھر کر شجر بناتے ہیں

    بس اب حکایت مزدوریٔ وفا نہ بنا

    وہ گھر انہیں نہیں ملتے جو گھر بناتے ہیں

    ترا بھی نام چھپا وجہ مرگ عاشق میں

    یہ دیکھ بے خبرے یوں خبر بناتے ہیں

    وہ کیا خدا کی پرستش کریں گے میری طرح

    جو ایک بت بھی بہت سوچ کر بناتے ہیں

    کہا یہ کس نے کہ ہے قصر عشق رہن شباب

    بنانے والے اسے عمر بھر بناتے ہیں

    تو آئے تو تری کاری گری کی لاج رہے

    ہم آج دشت میں رہ کر بھی گھر بناتے ہیں

    ملی نہ فرصت آرائش بیاباں بھی

    کہ ہم یہاں بھی ترے بام و در بناتے ہیں

    عدو ہواؤ کراچی کے لوگ ہارے نہیں

    جو گھر گراؤ وہ بار دگر بناتے ہیں

    ابو ظبی میں ہمیشہ نئی غزل عالؔی

    یہ لوگ ہی تو تجھے معتبر بناتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY