ترے جلال سے خورشید کو زوال ہوا

آغا اکبرآبادی

ترے جلال سے خورشید کو زوال ہوا

آغا اکبرآبادی

MORE BY آغا اکبرآبادی

    ترے جلال سے خورشید کو زوال ہوا

    ترے جمال سے مہتاب کو کمال ہوا

    خرام ناز میں ان کو یہ کب خیال ہوا

    کہ دل کسی کا پسا کوئی پائمال ہوا

    شباب سے تری رنگت کا طرفہ حال ہوا

    سپید جوڑا جو پہنا بدن میں لال ہوا

    جو وصل یار کی تدبیر کی وصال ہوا

    خیال عیش کا آیا تو اک ملال ہوا

    ہلال بدر ہوا بدر سے ہلال ہوا

    یہاں کمال کسی کا نہ بے زوال ہوا

    ہزاروں سیکڑوں پیدا ہوئے ہوئے ناپید

    نہ ایک دم بھی زمانے کو اعتدال ہوا

    رقیب قتل ہوا اس کی تیغ ابرو سے

    حرام زادہ تھا اچھا ہوا حلال ہوا

    بتوں کا ظلم کسی نے سنا نہ محشر میں

    خدا سے بھی مرا جھگڑا نہ انفصال ہوا

    کئے ہیں خوں سے کسی کے یہ دست و پا رنگین

    شکار تازہ کوئی آج کیا حلال ہوا

    جلایا مجھ کو تو تجھ کو بھی لگ گیا دھبہ

    جگر پہ داغ مرے رخ پہ تیرے خال ہوا

    جو میں جنوں میں گیا سوئے دشت اے آغاؔ

    تو مجھ کو دیکھ کے دیوانہ ہر غزال ہوا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY