تجھ بدن پر جو لال ساری ہے

فائز دہلوی

تجھ بدن پر جو لال ساری ہے

فائز دہلوی

MORE BYفائز دہلوی

    تجھ بدن پر جو لال ساری ہے

    عقل اس نے مری بساری ہے

    بال دیکھے ہیں جب سوں میں تیرے

    زلف سی دل کوں بے قراری ہے

    قد الف سا ہوا مرا جیوں دال

    عشق کا بوجھ سخت بھاری ہے

    سب کے سینے کو چھید ڈالا ہے

    پلک تیری مگر کٹاری ہے

    اوڑھنی اودی پر کناری زرد

    گرد شب کے سرج کی دھاری ہے

    قہر و لطف و تبسم و خندہ

    تیری ہر اک ادا پیاری ہے

    ترچھی نظراں سوں دیکھنا ہنس ہنس

    مور سے چال تجھ نیاری ہے

    زندہ فائزؔ کا دل ہوا تجھ سوں

    حسن تیرا بی فیض باری ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY