یہ کیا ہوا کہ سبھی اب تو داغ جلنے لگے

فرحان سالم

یہ کیا ہوا کہ سبھی اب تو داغ جلنے لگے

فرحان سالم

MORE BY فرحان سالم

    یہ کیا ہوا کہ سبھی اب تو داغ جلنے لگے

    ہوا چلی تو لہو میں چراغ جلنے لگے

    مٹا گیا تھا لہو کے سبھی نشاں قاتل

    مگر جو شام ڈھلی سب چراغ جلنے لگے

    اک ایسی فصل اترنے کو ہے گلستاں میں

    زمانہ دیکھے کہ پھولوں سے باغ جلنے لگے

    نگاہ طائر زنداں اٹھی تھی گھر کی طرف

    کہ سوز آتش گریاں سے داغ جلنے لگے

    اب اس مقام پہ ہے موسموں کا سرد مزاج

    کہ دل سلگنے لگے اور دماغ جلنے لگے

    اب آ بھی جا کہ یوں ہی دور دور رہنے سے

    یہ میرے ہونٹ وہ تیرے ایاغ جلنے لگے

    نہا کے نہر سے سالمؔ پری وہ کیا نکلی

    کہ تاب حسن سے خود اصطباغ جلنے لگے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY