یہ عمر بھر کا سفر ہے اسی سہارے پر

صابر وسیم

یہ عمر بھر کا سفر ہے اسی سہارے پر

صابر وسیم

MORE BY صابر وسیم

    یہ عمر بھر کا سفر ہے اسی سہارے پر

    کہ وہ کھڑا ہے ابھی دوسرے کنارے پر

    اندھیرا ہجر کی وحشت کا رقص کرتا ہے

    تمام رات مری آنکھ کے ستارے پر

    ہوائے شام ترے ساتھ ہم بھی جھومتے ہیں

    کسی خیال کسی رنگ کے اشارے پر

    کسی کی یاد ستائے تو جا کے رکھ آنا

    مہکتے پھول کسی آب جو کے دھارے پر

    افق کے پار ازل سے اک آگ روشن ہے

    یہ سارا کھیل ہے اس آگ کے شرارے پر

    مآخذ:

    • کتاب : siip-volume-47 (Pg. 50)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY