یوں باغ کوئی ہم نے اجڑتا نہیں دیکھا

یشپال گپتا

یوں باغ کوئی ہم نے اجڑتا نہیں دیکھا

یشپال گپتا

MORE BY یشپال گپتا

    یوں باغ کوئی ہم نے اجڑتا نہیں دیکھا

    مدت سے کسی پھول کا چہرہ نہیں دیکھا

    اس شہر میں شاید کوئی دل والا نہیں ہے

    جو حسن کہیں بنتا سنورتا نہیں دیکھا

    صیاد سے گل کرتے رہے جان کا سودا

    مالی نے لہو کا کوئی دریا نہیں دیکھا

    جو سکھ کے اجالے میں تھا پرچھائیں ہماری

    اب دکھ کے اندھیرے میں وہ سایا نہیں دیکھا

    ادراک کی سرحد پہ کئی بار گیا ہوں

    جو حد سے گزر جاتا وہ لمحہ نہیں دیکھا

    خوددارئ انساں کو اماں کیسے ملے گی

    مدت سے زمانے میں مسیحا نہیں دیکھا

    مآخذ:

    • کتاب : Shora-e-London (Pg. 179)
    • Author : Jauhar Zahiri
    • مطبع : Books From India (U.K) Ltd. 45, Museum Street,Londan W.C-1 (1985)
    • اشاعت : 1985

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY