یوں ترے مست سر راہ چلا کرتے ہیں

شمیم کرہانی

یوں ترے مست سر راہ چلا کرتے ہیں

شمیم کرہانی

MORE BYشمیم کرہانی

    یوں ترے مست سر راہ چلا کرتے ہیں

    جیسے شاہان فلک جاہ چلا کرتے ہیں

    غم دنیا غم جاناں غم منزل غم راہ

    کتنے غم زیست کے ہم راہ چلا کرتے ہیں

    دل بھی کیا راہ گزر ہے کہ ہمیشہ جس میں

    زہرہ و مشتری و ماہ چلا کرتے ہیں

    یہ تو رندوں کی گلی ہے ادھر اے شیخ کہاں

    ایسی راہوں میں تو گمراہ چلا کرتے ہیں

    غم دوراں کی کڑی دھوپ میں چلنے والے

    بہ تمنائے شب ماہ چلا کرتے ہیں

    ہم کو چلنا ہے جو گلشن میں تو اس طرح چلیں

    جیسے گلشن کے ہوا خواہ چلا کرتے ہیں

    یاد ماضی غم امروز امید فردا

    کتنے سائے مرے ہم راہ چلا کرتے ہیں

    وادئ دل ہے قدم سوچ کے رکھنا کہ شمیمؔ

    تیز اس راہ میں ناگاہ چلا کرتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY