jadeed urdu masnawi

ज़फ़र अंसारी ज़फ़र

ज़फ़र अंसारी ज़फ़र
2013 | अन्य
  • उप शीर्षक

    Fun Aur Fikri Abaad

  • सहयोगी

    ज़फ़र अंसारी ज़फ़र

  • श्रेणियाँ

    शोध एवं समीक्षा

  • पृष्ठ

    498

पुस्तक: परिचय

परिचय

"جدید اردو مثنوی ، فن اور فکری ابعاد" ظفری انصاری ظفر کی ایک اہم تصنیف ہے۔ مصنف نے اس کتاب میں 1874ء سے 2002 ء تک کے عرصے میں لکھی گئی مثنویوں کا فنی اور فکری جائزہ لیا ہے ۔507 صفحات کی اس ضخیم کتاب کے نام میں ہی صرف جدید کا لفظ نہیں ہے بلکہ کتاب بھی جدید ہے اور موضوع بھی جدید ہے۔کل پانچ ابواب پر مشتمل کتاب کے آخری دو ابواب میں مصنف نے ،جیسا کہ کتاب کے نام سے واضح ہوتا ہے ،جدید اردو مثنوی کے فنی اور فکری ابعاد کا خوب صورت اسلوب و انداز میں ناقدانہ جائزہ لیا ہے۔جدید مثنوی سے مراد ایسی مثنویاں ہیں جو 1857کے انقلاب کے بعد کے زمانے میں لکھی گئیں ۔اس سلسلے میں جن مثنوی نگاروں کا ذکر آیا ہے وہ ہیں حالی ،آزاد ،شبلی ،اسمٰعیل میرٹھی ،نظم طباطبائی ،شادعظیم آبادی ،علامہ اقبال ،حفیظ جالندھری ،جمیل مظہری ،سردار جعفری ،کیفی اعظمی ،جاں نثار اختر ،اختر انصاری ،عبدالمجید شمس ،علامہ سریر کابری اور اسلم بدر۔ ان کے علاوہ ذکی احمد ،قمر واحدی ،ابرار کرت پوری ،جوش ملیح آبادی ،شیخ احمد علی اور مرزا ہادی رسوا کاذکر بھی آیا ہے۔ مصنف نے عامر عثمانی کی مثنوی ’شاہنامہ اسلام جدید ، کا بھی ذکر کیا ہے جو ان کو دستیاب نہ ہوسکی ۔ان میں وہ مثنوی نگار بھی ہیں جن کو ہم مثنوی نگار کی حیثیت سے کم ہی جانتے ہیں جیسے مرزا ہادی رسوا۔لیکن پورے مطالعے میں حالی ،آزاد اور شبلی کو محوری حیثیت حاصل ہے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम