Author : Jameel Jalibi

Publisher : Mohammad Mujtaba Khan

Origin : Delhi (City), Other (District), Other (State), India (Country)

Year of Publication : 1977

Language : Urdu

Categories : Research & Criticism, Translation

Sub Categories : Criticism

Pages : 581

Contributor : Government Urdu Library, Patna

arasto se elliot tak

About The Book

نقد و انتقاد وہ فن ہے جس سے فن پارے کے محاسن و معائب اور اس کی قدر کو پرکھا جاتا ہے ۔ اس فن کے باقاعدہ اولین نقوش ہمیں ارستو کی کتاب " شعریات" سے مل جاتے ہیں ۔ اس طرح نقد و انتقاد کے فن کی باقاعدہ ابتداء تین سو سال قبل مسیح تک پہونچتی ہے۔ کتاب مذکور میں جمیل جالبی نے ارستو سے ایلیٹ تک کے بڑے اور معروف مغربی نقد کے شخصیات کے نظریات کو ذکر کیا ہے۔ ہماری نقد کی بنیاد مغربی انتقاد پر رکھی گئی ہے چاہئے مقدمہ حالی ہو یا موازنہ انیس و دبیر یا کوئی اور، اس لئے اپنے انتقادی اصول پڑھنے سے قبل ضروری ہے کہ منبع و مخرج کا مطالعہ کیا جائے۔ یہ کتاب بنیادی طور پر ترجمہ کا درجہ رکھتی ہے مگر مترجم نے اس میں اپنی انتھک کاوشوں کے بعد کچھ کمی و بیشی کر کے اس کو تصنیف کی حد تک پہونچا دیا ہے ۔ یہ کتاب موٹے طور پر ایک مقدمہ اور تین فصلوں پر مبنی ہے۔ سب سے پہلے کتاب کی ابتداء میں ایک مبسوط مقدمہ ہے جس میں مغربی نقد و انتقاد کی ڈھائی ہزار سال کے ادبی فکر کے ارتقاء کو مضوع بحث بنایا گیا ہے ۔ اس کے بعد پہلی فصل شروع ہوتی ہے جس میں تمام مصنفین کے بارے میں ایک تعارفی نوٹ لکھا گیا ہے تاکہ پہلے ذہنی و فکری طور پر قاری تیار ہو جائے اور اس کی اہمیت کو سمجھ لے کہ وہ آگے کس شخصیت کی فکر کا مطالعہ کرنے والا ہے۔ اس کے بعد اصل مضمون کا ترجمہ پیش کیا گیا ہے ۔ ہر زندہ زبان کو اس بات کی ضرورت پڑتی ہے کہ وہ قدیم و ثروت مند زبانوں سے کچھ نہ کچھ حاصل کرے ۔ یہی اردو زبان کے ساتھ ہوا کہ اس نے بھی اپنی لسانی برادری کے ساتھ ساتھ ہر اس زبان سے اثر قبول کیا جس سے وہ کر سکتی تھی۔ ویسے ان میں سے کچھ زبانیں تو وہ ہیں جو کہیں نہ کہیں اس سے پہلے ہی اس مغربی نقد کو قبول کر چکی تھیں۔ عربی جیسی غنی زبان نے بھی مغربی نقد و انتقاد سے اپنے گیسوئے دراز میں مشاطہ کیا اور اس کے بہت سے مصنفین نے ہزار سال سے بھی پہلے ان کی کتابوں کے ترجمے سے فراغت حاصل کر لی تھی، ابن مقفی ہو یا ابن رشد یا چاہےالکندی اور ابن سینا ہوں ۔ اسی طرح فارسی زبان نے بھی بہت پہلے استفادہ کر لیا تھا جب ہم نظامی عروضی سمرقندی کی "چہار مقالہ " کا مطالعہ کرتے ہیں تو جب اس کے شعر والے باب میں پہونچتے ہیں اور دقیق نظر سے مطالعہ کرتے ہیں تو ہمیں اس بات کا احساس ہوتا ہے کہ اس کے خیال ارستوئی نظریات کے حامل ہیں۔ مغربی نقد و انتقاد پر لکھی جانے والی کتابوں میں سب سے بہتر کتاب ہونے کا شرف اسی کو حاصل ہے۔

.....Read more

More From Author

Read the author's other books here.

See More

What Others Read

Curious what other readers are upto? Check this list of favorite Urdu books of Rekhta readers.

See More

Popular And Trending Read

Find out most popular and trending Urdu books right here.

See More