مصنف : مصطفی زیدی

ناشر : خالد شریف

زبان : Urdu

موضوعات : شاعری

ذیلی زمرہ جات : کلیات

صفحات : 700

معاون : جامعہ ہمدردہلی

کلیات مصطفیٰ زیدی

کتاب: تعارف

مصطفی زیدی جدید شعرا میں ایک اہم نام ہے۔ جن کی نظمیں داخل اور خارج کا حسین امتزاج ہیں۔مصطفی زیدی تیغ الہ آبادی کے نام سے بھی لکھتے رہے۔مصطفی زیدی شعرا کے اس گروہ سے تعلق رکھتے ہیں، جنہوں نے شاعری کو سچ بولنا سکھایا۔ مصطفی زیدی بنیادی طور پر اردو شاعری کی کلاسیکی روایت سے پیدا ہونے والے شعرا میں سے ہیں۔ جدید غز ل کی تشکیل میں مصطفیٰ زیدی کا بہت اہم حصہ ہے۔ وہ محبت اور زندگی کے بارے میں ایک خاص نکتہ نظر رکھتے ہیں۔ مصطفی زیدی ایک ایسے شاعر ہیں جن کی تخلیقی صلاحیتوں کو جوش ملیح آبادی اور فراق گورکھپوری جیسے بڑے شاعروں نے سراہا ہے۔ جوش نے مصطفی زیدی کی خود کشی کے سانحے پر اس انداز سے اظہار تعزیت کی تھی، "زیدی کی موت نے مجھ کو ایک ایسے جواں سال اور ذہین رفیق سفر سے محروم کردیا جو فکر کے بھیانک جنگلوں میں میرے شانے سے شانہ ملاکر چلتا اور مسائل کائنات سلجھانے میں میرا ہاتھ بٹایا کرتا۔"

.....مزید پڑھئے

مصنف: تعارف

نام سید مصطفی حسین زیدی اور تخلص زیدی تھا۔ شروع میں تیغ الہ آبادی تخلص کرتے تھے۔۱۰؍اکتوبر۱۹۲۹ء کو الہ آباد میں پیدا ہوئے۔اوائل طالب علمی ہی سے شاعری کا شوق پید ا ہوگیا تھا۔انٹرمیڈیٹ اور بی اے کے امتحانات امتیاز کے ساتھ پاس کیے۔ ایم اے (انگریزی) کا امتحان ۱۹۵۲ء میں گورنمنٹ کالج، لاہور سے پاس کیا۔ دوران تعلیم ان کی غیر معمولی قابلیت کے اعتراف میں انھیں کئی گولڈ میڈل اور تمغے ملے۔۱۹۵۴ء میں سول سروس کے امتحان میں کامیاب ہوئے۔مختلف شہروں میں ڈپٹی کمشنر رہے۔ حکومت پاکستان نے اعلی کارکردگی کے صلے میں انھیں’’تمغاے قائد اعظم ‘‘ عطا کیا۔۱۲؍اکتوبر۱۹۷۰ء کو کراچی میں مصطفی زیدی کی اچانک موت کا سانحہ رونما ہوا۔ ان کا پہلا مجموعہ شاعری’’روشنی‘‘ کے نام سے قیام پاکستان سے قبل شائع ہوا ۔ان کے دیگرشعری مجموعوں کے نام یہ ہیں: ’زنجیریں‘، ’شہرآذر‘، ’موج مری صدف صدف‘، ’گریباں‘، ’قباے ساز‘، ’کوہ ندا‘۔ بحوالۂ:پیمانۂ غزل(جلد دوم)،محمد شمس الحق،صفحہ:240

.....مزید پڑھئے

مصنف کی مزید کتابیں

مصنف کی دیگر کتابیں یہاں پڑھئے۔

مزید

قارئین کی پسند

اگر آپ دوسرے قارئین کی دلچسپیوں میں تجسس رکھتے ہیں، تو ریختہ کے قارئین کی پسندیدہ

مزید

مقبول و معروف

مقبول و معروف اور مروج کتابیں یہاں تلاش کریں

مزید

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
بولیے