آئے کیا تیرا تصور دھیان میں

غلام مولیٰ قلق

آئے کیا تیرا تصور دھیان میں

غلام مولیٰ قلق

MORE BY غلام مولیٰ قلق

    آئے کیا تیرا تصور دھیان میں

    کچھ سے کچھ ہے آن ہی کی آن میں

    یاں اشارات غلط پر زندگی

    واں ادا ہے اور ہی سامان میں

    تیغ قاتل ہے رگ گردن مری

    آب پیکاں دم تن بے جان میں

    یا تو قاتل ہو گیا رحم آشنا

    یا پڑے ہوں گے کہیں میدان میں

    اشک اپنے پھر پھرا کر ہر طرف

    آئے آخر تیرے ہی دامان میں

    ہائے کیسے کیسے وارستہ مزاج

    سرنگوں دم بند ہیں زندان میں

    کعبہ آنکھوں میں سماتا ہی نہیں

    کیا بتوں نے کہہ دیا کچھ کان میں

    آنکھ کے اٹھتے ہی اٹھتے کچھ نہ تھا

    ہم چلے ارمان ہی ارمان میں

    دیر و کعبہ پر نہیں موقوف کچھ

    اور ہی کچھ شان ہے ہر شان میں

    گریۂ صد سری اور ہم کم حوصلہ

    کشتی اپنی آ گئی طوفان میں

    جنت و دوزخ سے کیا امید و بیم

    حسرتیں سی حسرتیں ہیں جان میں

    خود پرستی اور اسلام آفریں

    کعبۂ عاشق ہے کفرستان میں

    اے قلقؔ کل تک گدائے دیر تھے

    آج دعوے ہو گئے ایمان میں

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites